ساہیوال : صوبائی حکومت نے ریونیو افسران کی صلاحیتوں پر اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے انہیں دوبارہ اختیارات سونپے ہیں ؛ نادر چٹھہ کمشنر ساہیوال

ساہیوال ( رپورٹ : محمد افضل جٹ ) کمشنر ساہیوال ڈویژن نادر چٹھہ نے ریونیو افسران پر زور دیا ھے کہ وہ عام آدمی کے مسائل حل کریں، ان تک اپنی رسائی یقینی بنائیں اور ان کی جائیدادوں کی حفاظت کریں، ریونیو افسران کو چاہیے کہ وہ انتقالات و رجسٹری کرنے کے دوبارہ تفویض ہونے والے اختیارات سے سائلین کو فوری ریلیف دیں۔ وہ یہاں اپنے دفتر میں ڈویژن بھر کے تحصیلداران اور نائب تحصیلدارا ن کے اجلاس خطاب کر رھے تھے جس میں انہیں صوبائی حکومت کی طرف سے اراضی انتقالات و رجسٹری کرنے کے اختیارات بارے تفصیلی بریفنگ دی گئی -ایڈیشنل کمشنر کوآرڈینیشن شفیق احمد ڈوگر اور اسسٹنٹ کمشنر ریونیو فضائل مدثر بھی اجلاس میں شریک ہوئے -کمشنر نادر چٹھہ نے کہا کہ صوبائی حکومت نے ریونیو افسران کی صلاحیتوں پر اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے انہیں دوبارہ اختیارات سونپے ہیں اور اب ہر ریونیو افسر کا فرض ہے کہ وہ عوام کی مشکلات کو حل کرے،تقسیم اور ونڈے کے کیسز میں مکمل غیر جانبدار ی کا مظاہرہ کرے اور عوام تک آسان رسائی ممکن بنائے -انہوں نے اختیارات کی دوبارہ منتقلی کے لئے سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو بابر حیات تارڑ کی کوششوں کو سراہا اوربتایا کہ پورے صوبے میں مزید ایک سو نئے تحصیلدار اور نائب تحصیلدار بھرتی کئے جا رہے ہیں جس سے افرادی قوت کی کمی بھی دور ہو گی اور سروس ڈیلوری میں بھی اضافہ ہو گا -کمشنر نادر چٹھہ نے اختیارات کی منتقلی کو ریونیو افسران کے لئے ٹیسٹ کیس قرار دیا اور ہدایت کی کہ وہ عام آدمی کی پہنچ میں رہیں تاکہ عوامی مسائل سے آگہی کے ساتھ ساتھ انہیں فوری حل بھی کیا جاسکے- اور اب ہر ریونیو افسر کا فرض ہے کہ وہ عوام کی مشکلات کو حل کرے،تقسیم اور ونڈے کے کیسز میں مکمل غیر جانبدار ی کا مظاہرہ کرے اور عوام تک آسان رسائی ممکن بنائے -انہوں نے اختیارات کی دوبارہ منتقلی کے لئے سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو بابر حیات تارڑ کی کوششوں کو سراہا اوربتایا کہ پورے صوبے میں مزید ایک سو نئے تحصیلدار اور نائب تحصیلدار بھرتی کئے جا رہے ہیں جس سے افرادی قوت کی کمی بھی دور ہو گی اور سروس ڈیلوری میں بھی اضافہ ہو گا -کمشنر نادر چٹھہ نے اختیارات کی منتقلی کو ریونیو افسران کے لئے ٹیسٹ کیس قرار دیا اور ہدایت کی کہ وہ عام آدمی کی پہنچ میں رہیں تاکہ عوامی مسائل سے آگہی کے ساتھ ساتھ انہیں فوری حل بھی کیا جاسکے-

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں