سیئول : جنوبی کوریا میں سام سنگ کے ارب پتی نائب صدر کو کرپشن پر ڈھائی سال قید

سیئول ( انٹرنیشنل ڈیسک ) جنوبی کوریا میں معروف ٹیکنالوجی کمپنی سام سنگ کے نائب صدر لی جائی یانگ کو کرپشن کے الزامات ثابت ہونے پر ڈھائی سال قید کی سزا سنائی گئی ہے۔عالمی خبر رساں ادارے کے مطابق جنوبی کوریا کی عدالت عالیہ میں 2016 میں مملکت کے صدر کی استعفے کا باعث بننے والے مشہور کرپشن اسکینڈل کے مقدمے کی سماعت ہوئی جس میں سام سانگ کے نائب صدر کو پیش گیا۔سام سنگ کے نائب صدر لی جائی یانگ پر 2015 میں سام سنگ کی دو سسٹرز کمپنیوں کے انظمام کی ڈیل کے سلسلے میں اُس وقت کے صدر اور اپنے قریبی دوست پارک جین ہائی کو حکومتی مدد دینے کے عوض رشوت دینے کا الزام تھا۔اس الزام پر ملک میں تہلکہ مچ گیا تھا اور شدید عوامی ردعمل سامنے آیا تھا یہاں تک کے مظاہروں اور ریلیوں کے دباؤ کے باعث 2016 میں صدر پارک جین ہائی کو اپنے عہدے سے مستعفی ہونا پڑا تھا۔عدالت میں پراسیکیوٹر کی جانب سے پیش کیے گئے شواہد اور گواہان کے بیانات کی روشنی میں جج نے سام سنگ کے ارب پتی نائب صدر لی جائی یانگ کو ڈھائی سال کی قید کی سزا سنائی ہے جس پر انہیں احاطہ عدالت سے حراست میں لے لیا گیا ہے۔واضح رہے صدر کی مدد سے ہونے والی اس ڈیل سے جنوبی کوریا کے سب سے بڑے کاروباری گروپ ’سام سنگ‘ کی ملکی معیشت پر گرفت مزید مضبوط ہوئی تھی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں