کوئٹہ : بلوچستان میں دہشتگردی کے پیچھے بھارت ہے۔ کچھ دہشتگرد گروپس اور داعش کا اتحاد ہو چکا ہے ؛ عمران خان

کوئٹہ ( نمائندہ خصوصی ) وزیراعظم عمران خان آج سانحہ مچھ کے متاثرین سے ملاقات کے لیے آج کوئٹہ گئے جہاں انہوں نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ بلوچستان میں دہشتگردی کے پیچھے بھارت ہے۔ کچھ دہشتگرد گروپس اور داعش کا اتحاد ہو چکا ہے۔انہوں نے کہا کہ ہزارہ کمیونٹی کی شیعہ برادری کا قتل افسوسناک ہے۔ مجھے ہزارہ برادری کے ساتھ ہونے والے ظلم پر بہت دکھ اور افسوس ہے۔ شیعہ ہزارہ کمیونٹی کی نسل کشی کی جا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہزارہ برادری کی سکیورٹی کے لیے بھرپور انتظامات کر رہے ہیں ۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ داعش کو بھارت کی سپورٹ حاصل ہے۔ افغان جہاد ختم ہونے کے بعد عسکری گروپ باقی رہ گئے۔ ان عسکری گروپس نے پاکستان کو بہت نقصان پہنچایا۔ انہوں نے کہا کہ مارچ میں ہی کابینہ کو بھارت کی فرقہ ورانہ تصادم کی کوششوں سے آگاہ کر دیا تھا۔ بھارت نے پاکستان میں شیعہ سنی فسادات کروانے کی کوشش کی۔ مولانا عادل کا قتل پاکستان میں فرقہ ورانہ فسادات کو ہوا دینے کی کوشش تھا۔ وزیراعظم عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ بلوچستان کی تباہی میں وہاں کے سرداری سسٹم کا بھی کردار ہے۔ ماضی میں ترقیاتی فنڈز سرداروں کے ذریعے دئے جاتے تھے۔ سردار امیر ہو گئے جبکہ بلوچستان کے عوام غریب رہ گئے۔ جام کمال اچھے وزیراعلیٰ ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہماری حکومت بلوچستان پر خصوصی توجہ دے رہی ہے۔ انہوں نے پاک فوج کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے خفیہ ادارے اورافواج بہترین ہیں۔ ہمارے اداروں نے کئی دہشتگردوں کو دہشتگردی سے قبل ہی گرفتار کیا۔ ہمارے اداروں نے مسلکی تصادم کو روکنے میں بہترین کام کیا۔ ہماری ایجنسیز نے بھارتی عزائم کو ناکام بنایا۔ ہماری سکیورٹی ایجنسیز مسلسل اقدامات کر رہی ہیں۔ خیال رہے کہ آج وزیراعظم عمران خان کوئٹہ پہنچے جہاں انہوں نے سانحہ مچھ کے متاثرین سے بھی ملاقات کی۔ وزیراعظم عمران خان سے مچھ کے متاثرین اور شہدا کمیٹی نے سردار بہادر خان یونیورسٹی میں ملاقات کی۔ اس موقع پر ہزارہ کمیونٹی کے عمائدین، مجلس وحدت المسلمین کے رہنما سید آغا رضا اور مشیر کھیل عبدالخالق ہزارہ بھی موجود تھے۔ وزیراعظم نے انہیں سانحہ کے قاتلوں کو پکڑنے کی حکومتی کوششوں سے آگاہ کیا اور مالی پیکیج کے بارے میں بھی بتایا۔ قبل ازیں عمران خان کی زیر صدارت وزیر اعلیٰ ہاوٴس میں امن و امان سے متعلق اعلیٰ سطح کا اجلاس ہوا جس میں وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال، وفاقی وزیرداخلہ شیخ رشید، صوبائی وزرا، کمانڈر سدرن کمانڈ لیفٹیننٹ جنرل سرفراز علی، آئی جی پولیس، آئی جی ایف سی اور دیگر اعلیٰ حکام نے شرکت کی۔ جس کے بعد وزیراعظم عمران خان نے وزیراعلیٰ بلوچستان جام کمال سے علیحدہ ملاقات بھی کی۔ یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ سانحہ مچھ کے شہدا کو چھ روز کے بعد آج ہی سپرد خاک کیا گیا تھا جس کے بعد وزیراعظم عمران خان کوئٹہ پہنچے تھے۔ گذشتہ روز وزیراعظم عمران خان کی ہدایت پر وفاقی وزرا علی زیدی، زلفی بخاری، ڈپٹی اسپیکر قومی اسمبلی قاسم خان سوری، بلوچستان کے وزیراعلیٰ جام کمال خان پر مشتمل وفد نے ہزارہ برادری سے ملاقات کی اور سانحہ مچھ کے خلاف دھرنا دینے والے مظاہرین کو دھرنا ختم کرنے کے لیے آمادہ کیا اور ان سے کامیاب مذاکرات کیے تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں